183

بینظیر بھٹو ہسپتال کے نرسز ہاسٹل کی خستہ حالی

راولپنڈی (رائلسن نیوز، اسرار احمد) بے نظیر بھٹو ہسپتال کا خستہ حال نرسنگ ہاسٹل کسی وقت بھی زمین بوس ہو سکتا ہے، سینکڑوں نرسز کی زندگیاں شدید خطرے میں۔

شہر کے سب سے بڑے بے نظیر بھٹو ہسپتال کا نرسنگ ہاسٹل حکومت و انتظامیہ کی لاپرواہی وجہ سے خستہ حالی کا شکار ہو گیا جو کہ کسی بھی وقت منہدم ہو کے نقصان کا باعث بن سکتا ہے۔

مسلسل ہونے والی بارشوں کے پانی سے ہاسٹل کی بلڈنگ بری طرح متاثر ہو چکی ہے۔ جس کی جانب ارباب اختیار توجہ نہیں دے رہے۔

بارش کا پانی چھتوں، دیواروں سے رس رس کر نرسز کے رومز، واش رومز اور کچن تک آرہا ہے۔ اور حالات ناقابل بیان حد تک مشکل ہو چکے ہیں۔

دن بھر ہسپتال میں ایڈمٹ مریضوں کی دیکھ بھال میں مصروف نرسز کو اس حوالے سے بہت مشکلات کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے اور کورونا کے خلاف جاری جنگ میں نرسز کے مسلے کی جانب کوئی توجہ نہیں دی جا رہی۔

اس وقت ہاسٹل میں 35 سٹاف نرسز جبکہ تین سو سے زائد نرس سٹوڈنٹس رہائش پذیر ہیں جن کی زندگیوں کو سنگین خطرات عمارت کی خستہ حالی کی وجہ سے لاحق ہو گئے ہیں۔

حکومت اور انتظامیہ نے مکمل طور پر آنکھیں بند کر رکھی ہیں۔

فیصلہ ساز خود عالیشان محلات کے مکیں ہیں جب کہ دن رات کورونا کے خلاف مصروف اور عام طور بھی ہسپتال میں مستعدی سے فرائض سر انجام دینے والی نرسز بھوت بنگے جیسی عمارت میں رہ رہی ہیں۔

اس حوالے سے جب موقف لینے کی کوشش کی گئی تو ہاسٹل انتظامیہ نے موقف دینے سے انکار کر دیا۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں